جوکھی

اعظم سمور

میں جوکھی
میں اپنی ذات دی جوع دا کھوجی
اپنا کُھرا میں چاواں
ہر تھاں پَیر کچھا کے
آپ ای چور سداواں
ہر ہر پَتّر ساوا دِساں
میں ہر ہر پُھل گلابی
میں ہی امرت میں ہی مُدرا
نالے ہر ہر رس شرابی
میں ہی سچ اس کُوڑ کویتا
جُگ ورتارا کھوٹا
میری ذات نوں ناپن والا
ہر پیمانہ چھوٹا

Read this poem in Roman or ਗੁਰਮੁਖੀ

اعظم سمور دی ہور شاعری