بلھے شاہ

تیرے عشق نچایا کر کے تھیّا تھیّا

تیرے عشق نچایا کر کے تھیّا تھیّا

تیرے عشق نے ڈیرا، میرے اندر کیتا
بھر کے زہر پیالہ، میں تاں آپے پیتا
جھبدے بوہڑِیں وے طبیبا، نہیں تے میں مر گیاں

تیرے عشق نچایا کر کے تھیّا تھیّا

چھپ گیا وے سُورج، باہر رہ گئی آ لالی
وے میں صدقے ہوواں، دیویں مُڑ جے وکھالی
پیرا! میں بھل گئی آں تیرے نال نہ گئی آ

تیرے عشق نچایا کر کے تھیّا تھیّا

ایس عشق دے کولوں، مینوں ہٹک نہ مائے
لاہُو جاندڑے بیڑے، کیہڑا موڑ لیائے
میری عقل جو بُھلّی، نال مہانیاں دے گئی آ

تیرے عشق نچایا کر کے تھیّا تھیّا

ایس عشقے دی جھنگی وچ مور بولیندا
سانوں قبلہ تے کعبہ، سوہنا یار دسِیندا
سانوں گھائل کر کے، پھیر خبر نہ لئی آ

تیرے عشق نچایا کر کے تھیّا تھیّا

بُلھّا شَوہ نے آندا، مینوں عنایت دے بُوہے
جس نے مینوں پوائے ، چولے ساوے تے سُوہے
جاں میں ماری ہے اَڈّی، مِل پیا ہے وہیّا

تیرے عشق نچایا کر کے تھیّا تھیّا

Read this poem in: Roman  ਗੁਰਮੁਖੀ 

بلھے شاہ دی ہور شاعری