ز زاری ہے مِنت اساڈی

ز زاری ہے مِنت اساڈی عُذر نہیں کجھ کرنا ایں میں
مُڑیاں لاج عشق نُوں لگدی مر نوں مول نہ ڈرنا ایں میں
فرید بخش جاں اُلٹی چکی سِر بھی اگے دھرنا ایں میں

حوالہ: سہ حرفی، فرید بخش؛ اپنا امریکہ 1914؛ صفحہ 10