ہائے نی

شو کمار بٹالوی

ہائے نی ! اج انبر لسے لسے
ہائے نی ! اج تارے ہسے ہسے
ہائے نی ! اج موئیاں موئیاں پوناں
ہائے نی ! جگ وسدا قبراں دسے
ہائے نی ! اج پتھر ہوئیاں جیبھاں
ہائے نی ! دل بھریا پل پل پھسے
ہائے نی ! میری ریس نہ کریو کوئی
ہائے نی ! عشقے دے پانی رسے
ہائے نی ! ایہ ڈاڈھے پنیڈے لمے
ہائے نی! نریاں سولاں گٹے گٹے
ہائے نی! ایتھے سبھ کجھ لٹیا جاندا
ہائے نی ! ایتھے موت آوندی حصے
ہائے نی ! اج پریت دے نغمے کوڑے
ہائے نی ! ایہ زہر نیں مٹھے مٹھے

دوجی لِپی وچ پڑھو

Roman    ਗੁਰਮੁਖੀ   

شو کمار بٹالوی دی ہور شاعری