ہمزاد دا دُکھ

پِچھلی راتیں تیز ہوا
سارے شہر وِچ پھردی رہی
زہری قہر دا کوئی وظیفہ
چاروں پاسے کردی رہی

میں تے بُوہا بند ای رکھیا
اپنے پورے زور نال
پتہ نئیں کیہ بیتی ہووے
میرے جیہے کِسے ہور نال