زلفاں والے جال چہ ہُن میں نہیں آنا

See this page in :  

زلفاں والے جال چہ ہُن میں نہیں آنا
اڑیے تیری چال چہ ہُن میں نہیں آنا

ہُن دوبارہ میں ایہ غلطی نہیں کرنی
عشقے دے جنجال چہ ہُن میں نہیں آنا

تیری ونجھلی نے دل موہیا سی میرا
ونجھلی دے سُر، تال چہ ہُن میں نہیں آنا

اوہ اکھیاں چوں تیر چلان چہ ماہر اے
اوہدے ایس کمال چہ ہُن میں نہیں آنا

اوہنے آخری چِٹھی دے وچ لکھیا سی
تیرے مست خیال چہ ہُن میں نہیں آنا

حوالہ: دل درگاہ؛ پرنٹ میڈیا پبلی کیشنز لاہور؛ صفحہ 24

طلحہ بن سہیل دی ہور شاعری