حق ہے، حق ہے، حق ہے

حق ہے، حق ہے، حق ہے
بیا کُل کُوڑ ناحق ہے

حق باطل، حق ہے فی الواقع
پر ایہہ رمز ادق ہے

باطل نہ ہے تے نہ ہوسی
گالھیں آکھن پک ہے

جیہڑا حق کوں باطل جانیں
اوہ جاہل احمق ہے

بُت کو صورت حق دی سمجھے
جو عاشق لاتک ہے

ذوق سماع تے حُسن پرستی
جذبہ دی چقمق ہے

درد منے مونہہ کیوں چائے
دل شوہدی شارک ہے

بِن آدم دل ہے وی ناہیں
توڑے خاص ملک ہے

وچ مدہوشی بے خوشی دے
مستیں دا مسلک ہے

ہر حس دے ادراکوں ہر دا
ہک واحد مدرک ہے

مقصد ہر دم عین حضوری
خطریں دے ایں چک ہے

سُن سمادھ لگاون باجھوں
بنی سُکھنی بک بک ہے

نفسوں روحوں فانی تھیون
طالب دا اوڑک ہے

روز ازل دی دلڑی دانی
کُل غیروں مُفک ہے

نور حقیقت جامع دے وچ
جِندڑی مستغرق ہے

دل وچ ربط شہود حقیقی
کیا سوہنا کیا چھک ہے

جوگی جوگ کماون کیتے
ایہہ ٹونا ٹُھک پَھک ہے

حوالہ: آکھیا میاں جوگی نے؛ آصف خان؛ صفحہ 208