میں تے تُوں گلشن دیال

گلشن دیال

میں تے تُوں گلشن دیال میں خالی خالی ہاں تاں اس لئی کہ میں میں وچون غیر حاضر ہاں میں بھری بھری ہاں تاں اس لئی کہ میں میں ہاں ہی نہیں میرے اندر تاں تُوں ہیں میں کوئی گیت ہاں کیونکہ توں گاؤندا ہیں میں سنگیت ہاں کیونکہ تار تُوں چھیڑدا ہیں میں نظم ہاں اس لئی کیہ توں لکھی ہے ہوا ہاں میں اس لئی کیہ ایہہ تیرے لئے ہوئے ساہ نیں میں نیر ہاں کیونکہ تیری برسات ہے میں نگھ ہاں کیوں جو توں چھوہیا ہے مینو ں میں جیون ہاں کیونکہ جان توں پائی ہے میں مسکان ہاں کیونکہ تیرے ہوٹھاں توں آئی ہے میں اگ ہاں کیونکہ تیرے انگ لگی ہاں اُچائی ہاں میں کیونکہ تیرا سنگ ہے روشنی ہاں میں توں سوریہہ ہیں جیوں شیتلتا ہاں میں کیونکہ توں چن ہیں لہر ہاں میں کیوں کہ توں ساگر ہیں میرا گھاٹی ہاں میں کیونکہ توں میری ڈونگھائی ہیں مِٹھی مہک ہاں میں کیوں جو تیرا ہی پنڈا ہاں میں تیری دعا ہاں میں کیونکہ سجدہ جو توں کیتا ہے کیوں ایہہ میں تے توں دی گل ہے جاندے ہاں پرچھاواں تاں جُثے دا ہی ہوندا ہے حاصل کرن تے حاصل ہون دی اِچھا توں آزاد ہاں اسیں

Share on: Facebook or Twitter
Read this poem in: Roman or Gurmukhi

گلشن دیال دی ہور شاعری