اب لگن لگی کیہ کریے

اب لگن لگی کیہ کریے، نہ جی سکیے، نہ مریے

تم سنو ہماری بیناں
موہے رات دِنے نہیں چیناں
ہُن پی بِن پلک نہ سریے

اب لگن لگی کیہ کریے، نہ جی سکیے، نہ مریے

ایہہ اگن بِرہوں دی جاری
کوئی ہمری پِیت نواری
بِن درشن کیسے تریے

اب لگن لگی کیہ کریے، نہ جی سکیے، نہ مریے

بُلھا پئی مصیبت بھاری
کوئی کرو ہماری کاری
ایہہ جیہے دُکھ کیسے جریے

اب لگن لگی کیہ کریے، نہ جی سکیے، نہ مریے

حوالہ: آکھیا بلھے شاہ نے؛ محمد آصف خان؛ پاکستان پنجابی ادبی بورڈ لاہور؛ صفحہ 61 ( ویکھو )