اُٹھ گئے گوانڈھوں یار

بلھے شاہ

اُٹھ گئے گوانڈھوں یار
رَبّا ہُن کِیہ کریے

اُٹھ چلّے ہُن رہندے ناہیں
ہویا ساتھ تیار
رَبّا ہُن کِیہ کریے

ڈاڈھ کلیجے بل بل اُٹھے
بَھڑکے بِرہوں نار
رَبّا ہُن کِیہ کریے

بُلھا شَوہ پیارے باجھوں
رہے اُرار نہ پار
رَبّا ہُن کِیہ کریے

اُٹھ گئے گوانڈھوں یار
رَبّا ہُن کیہ کریے

دوجی لِپی وچ پڑھو

Roman    ਗੁਰਮੁਖੀ   

بلھے شاہ دی ہور شاعری