بُلھا کیہ جاناں میں کون

بلھے شاہ

بُلھا کیہ جاناں میں کون

نہ میں مومن وچ مسیت آں
نہ میں وچ کفر دی ریت آں
نہ میں پاکاں وچ پلیت آں
نہ میں موسٰی نہ فرعون

بُلھا کیہ جاناں میں کون

نہ میں اندر بید کتاباں
نہ وِچ بھنگاں نہ شراباں
نہ وِچ رِنداں مست خراباں
نہ وِچ جاگن نہ وچ سون

بُلھا کیہ جاناں میں کون

نہ وچ شادی نہ غمناکی
نہ میں وچ پلیتی پاکی
نہ میں آبی نہ میں خاکی
نہ میں آتش نہ میں پَون

بُلھا کیہ جاناں میں کون

نہ میں عربی نہ لاہوری
نہ میں ہندی شہر نگوری
نہ ہندو نہ تُرک پشوری
نہ میں رہندا وِچ ندَون

بُلھا کیہ جاناں میں کون

نہ میں بھیت مذہب دا پایا
نہ میں آدم حوّا جایا
نہ میں اپنا نام دھرایا
نہ وِچ بیٹھن نہ وچ بَھون

بُلھا کیہ جاناں میں کون

اول آخر آپ نوں جاناں
نہ کوئی دُوجا ہور پچھاناں
میتھوں ہور نہ کوئی سیانا
بلھا! اوہ کھڑا ہے کون

بُلھا کیہ جاناں میں کون

دوجی لِپی وچ پڑھو

Roman    ਗੁਰਮੁਖੀ   

بلھے شاہ دی ہور شاعری