بلھے شاہ

رانجھا رانجھا کردی نی میں آپے رانجھا ہوئی

رانجھا رانجھا کردی نی میں آپے رانجھا ہوئی
سدّو نی مینُوں دھیدو رانجھا، ہِیر نہ آکھو کوئی

رانجھا میں وِچ، میں رانجھے وِچ، مینوں ہور خیال نہ کوئی
میں نہیں اوہ آپ ہے اپنی، آپ کرے دلجوئی
جو کوئی ساڈے اندر وسّے، ذات اساڈی سو ای
ہَتّھ کُھونڈی میرے اگے مَنگُو، موڈھے بُھورا لوئی
بُلّھا ہیر سَلیٹی ویکھو، کِتّھے جا کھلوئی
جس دے نال میں نیونہہ لگایا، اوہو جیہی ہوئی
تخت ہزارے لے چل بُلھیا، سیالِیں ملے نہ ڈھوئی

Read this poem in: Roman  ਗੁਰਮੁਖੀ 

بلھے شاہ دی ہور شاعری